- Advertisement -

ایک آئینہ مثال کی سرگوشی

ایوب خاور کی اردو نظم

یہ تُو نے کیا کہا
کہ شرم سے ہوا کا رنگ بھی گلال ہو گیا
مری مثال ہو گیا
ذرا سنو
یہ کس کی خواب ناک دستکوں کا نُور ہے
کہ ہر طرف ہیں آئینے ہی آئینے سجے ہوئے
یہ کون دل کی دھڑکنوں کے پاس آ کے رک گیا
یہ کیا ہوا
میری نظر کا رنگ ہی بدل گیا
یہ تُو نے کیا کہا
کہ میں نے اپنے آپ کو بھلا دیا
مَیں سو رہی تھی اک حسین خواب میں رنگی ہوئی
تری صدا نے گہری نیند سے مجھے جگا دیا
یہ آج تُو نے مجھ کو مجھ سے کس طرح ملا دیا
یہ کیا ہوا
دل و نظر کے سلسلے کہاں پہ لے کے آ گئے
یہ کیا ہوا
فضا میں کیوں میری ہنسی کی چاندنی بکھر گئی
جہاں جہاں قدم رکھوں بہار ہی بہار ہے
بہار کی طرح یہ کون میرے دل پہ چھا گیا
یہ سبز مخملیں فضا میں کھیل دھوپ چھاؤں کا
اور ایسی دھوپ چھاؤں میں
یہ تُو نے کیا کہا
کہ شرم سے ہوا کا رنگ بھی گلال ہو گیا
میری مثال ہو گیا

ایوب خاور 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
ایوب خاور کی اردو نظم