- Advertisement -

سینوں میں تپش ہے کبھی شورش ہے سروں میں

خورشید رضوی کی ایک اردو غزل

سینوں میں تپش ہے کبھی شورش ہے سروں میں

کیا چیز بسا دی گئی مٹی کے گھروں میں

چلتا ہوں سدا ساتھ لئے اپنی فصیلیں

پہچان سکا کون مجھے ہم سفروں میں

اڑنا ہے تو تہذیب کرو سوز دروں کی

یہ ورنہ کہیں آگ لگا دے نہ پروں میں

غیروں میں ہوئی عام تری دولت دیدار

اک کحل بصر تھا کہ لٹا بے‌ بصروں میں

دو گام پہ تم خود سے بچھڑ جاتے ہو خورشیدؔ

اور لوگ سمجھتے ہیں تمہیں راہبروں میں

خورشید رضوی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
خورشید رضوی کی ایک اردو غزل