- Advertisement -

تم سے کہنا تھا

ایوب خاور کی اردو نظم

اِک نظر کی فرصت میں
سطحِ دل پہ کھل اُٹھے
لفظ بھی، معانی بھی
خامشی کی جھلمل میں
آگ بھی تھی، پانی بھی
دِل نے دھڑکنوں سے بھی
جو کہی نہیں اب تک
اَن کہی کہانی بھی
ان کہی کہانی میں
آنکھ بھر تمنّا تھی
ہاتھ بھر کی دُوری پر
لمس بھر کی قربت تھی
لمحہ بھر کا سپنا تھا

ایوب خاور 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
فرزانہ نیناں کی اردو غزل