- Advertisement -

مجھ کو یہ فکر کب ہے کہ سایہ کہاں گیا

فیصل عجمی کی ایک اردو غزل

مجھ کو یہ فکر کب ہے کہ سایہ کہاں گیا

سورج کو رو رہا ہوں خدایا کہاں گیا

پھر آئنے میں خون دکھائ دیا مجھے

آنکھوں میں آ گیا تو چھپایا کہاں گیا

آواز دے رہا تھا کوئ مجھ کو خواب میں

لیکن خبر نہیں کہ بلایا کہاں گیا

کتنے چراغ گھر میں جلاۓ گۓ، نہ پوچھ

گھر آپ جل گیا ہے ، جلایا کہاں گیا

یہ بھی خبر نہیں ہے کہ ہمراہ کون ہے

پوچھا کہاں گیا ہے ، بتایا کہاں گیا

وہ بھی بدل گیا ہے مجھے چھوڑنے کے بعد

مجھ سے بھی اپنے آپ میں آیا کہاں گیا

تجھ کو گنوا دیا ہے مگر اپنے آپ کو

برباد کر دیا ہے ، گنوایا کہاں گیا

فیصل عجمی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi