- Advertisement -

Gosh Har Deewar Hay

A Ghazal By Iftikhar Shahid

گوش بر دیوار ہے
کس قدر آزار ہے

چارہ گر ہے اِس طرف
اُس طرف بیمار ہے

تیر پیچھے سے لگے تو
دوستوں کا وار ہے

دائرہ در دائرہ
گھومتی پرکار ہے

لوٹتا کوئی نہیں
جانے کیا اس پار ہے

اس قدر اصرار ہے تو
جائیے انکار ہے

پھول جیسے ھاتھ میں
آج کل تلوار ہے

کوچہ ۶ دلدار سے
دو قدم پہ دار ہے

در بنانا چاہتا ہوں
سامنے دیوار ہے

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
کرشن چندر کا ایک افسانہ