- Advertisement -

ستارہ ایک چلو آسماں سے ٹوٹ گیا

فرزانہ نیناں کی اردو غزل

ستارہ ایک چلو آسماں سے ٹوٹ گیا
پیالہ حادثۂ ناگہاں سے ٹوٹ گیا
سفر کی آخری منزل پہ جانے والے گئی
چلا تھا ساتھ کہاں پر کہاں سے ٹوٹ گیا
سمجھ میں کیوں نہیں آتا یہ کیا معمہ ہے
یقیں کا رشتہ اچانک گماں سے ٹوٹ گیا
جو دل کے غار میں تعویذ لکھ کے رکھتا تھا
اُسی کا رابطہ، تسبیح خواں سے ٹوٹ گیا
رہیں گی تم سے خیالات میں ملاقاتیں
بحال سلسلہ ہوگا جہاں سے ٹوٹ گیا
میں تم سے کہہ نہیں پائی تھی ماجرا دل کا
کہ واسطہ ہی مکیں کا مکاں سے ٹوٹ گیا
خزاں کے آنے سے پہلے یہ کیا ہوا نیناں
ہزار رشتۂ گل، گلستاں سے ٹوٹ گیا

فرزانہ نیناں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
فرزانہ نیناں کی اردو غزل