- Advertisement -

Kab Samaa Tha

An Urdu Ghazal By Saghar Saddique

ساغر صدیقی

کب سماں تھا بہار سے پہلے

غم کہاں تھا بہار سے پہلے

ایک ننھا سا آرزو کا دیا

ضو فشاں تھا بہار سے پہلے

اب تماشا ہے چار تنکوں‌کا

آشیاں تھا بہار سے پہلے

اے مرے دل کے داغ یہ تو بتا

تو کہاں تھا بہار سے پہلے

پچھلی شب میں خزاں کا سناٹا

ہم زباں‌تھا بہار سے پہلے

چاندنی میں‌یہ آگ کا دریا

کب رواں تھا بہار سے پہلے

بن گیا ہے سحابِ موسمِ گل

جو دھواں تھا بہار سے پہلے

لُٹ گئی دل کی زندگی ساغر

دل جواں‌تھا بہار سے پہلے

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Saghar Saddique