- Advertisement -

خود کو تلاش کر کے ہی گمنام ہو گئے

شازیہ اکبر کی اردو غزل

خود کو تلاش کر کے ہی گمنام ہو گئے
ایسے بھی زندگی میں کئی کام ہو گئے
صورت گری کی ایسی اب عادت پڑی ہمیں
پتھر جو ہاتھ آئے تو اصنام ہو گئے
اب تو خدا بھی اپنا نہیں کر رہا یقیں
اتنے کسی کے پیار میں بدنام ہو گئے
وابستہ اِس قدر ہوئے اِک دوسرے سے ہم
ان کے گنہ بھی اپنے ہی الزام ہو گئے
آئے تھے تُم سے پہلے جو خوابوں کے نغمہ گر
لے کر صدائیں اپنی وہ بے نام ہو گئے

شازیہ اکبر

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
شازیہ اکبر کی اردو غزل