اردو غزلیاتسعود عثمانیشعر و شاعری

سب خواب میں ہیں کون سنے گا

سعود عثمانی کی ایک اردو غزل

سب خواب میں ہیں کون سنے گا نوائش

گویا ہے ماورائے سماعت صدائے شب

اک چاند میرے ساتھ چلا پھر پلٹ گیا

کس ہمسفر نے ساتھ دیا ماسوائے شب

حیرت سے سوچتا ہوں کہ جشنِ طلوعِ مہر

اک ابتدائے صبح ہے یا انتہائے شب

کرنوں نے بڑھ کے روک دیا سیل تیرگی

سورج نے آ کے ختم کیا ارتقائے شب

فردا کے ایک وعدۂ روشن کے باوجود

کچھ اور ظلمتیں ہیں ابھی ماورائے شب

سعود عثمانی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button