- Advertisement -

Khain Frayaad Bhi Mohtaaj

An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi

کہیں فریاد بھی محتاجِ اثر ہوتی ہے

وہ تو وہ ان کے فرشتوں کو خبر ہوتی ہے

دم الٹتا ہے قضا پیشِ نظر ہوتی ہے

اس شبِ غم کی مزاروں میں سحر ہوتی ہے

دل سنبھلتا ہے نہ تسکینِ جگر ہوتی ہے

کس بلا کی خلشِ تیرِ نظر ہوتی ہے

گہہ نظر چرخ پہ گہہ جانبِ در ہوتی ہے

رات فرقت کی بری طرح بسر ہوتی ہے

گر نہیں خواب تو کیوں پھول کھلے دیکھتا ہوں

فصل یہ تو مجھے صیاد کے گھر ہوتی ہے

فصلِ گل آتے ہی جلتا ہے نشیمن میرا

چرخ کی کوندنے والی مرے گھر ہوتی ہے

تیری فرقت میں کوئی مونس و ہم دم نہ رہا

اک شبِ غم ہے جو تنہا مرے گھر ہوتی ہے

جان دے دیں گے کسی دامنِ صحرا میں قمرؔ

مر گیا کون کہاں کس کو خبر ہوتی ہے

۔۔۔۔

دل اگر ہوتا تو مل جاتا نشانِ آرزو

تم نے تو مسمار ہی کر ڈالا مکانِ آرزو

نا مکمل رہ گیا آخر بیانِ آرزو

کہتے کہتے سو گئے ہم داستانِ آرزو

دل پہ رکھ لو ہاتھ پھر سننا بیانِ آرزو

داستانِ آرزو ہے داستانِ آرزو!

حضرتِ موسیٰ یہاں لغزش نہ کر جانا کہیں

امتحانِ آرزو ہے امتحان آرزو

دل مرا دشمن سہی لیکن کہوں تو کیا کہوں

راز دانِ آرزو ہے راز دانِ آرزو

تم تو صرف اک دید کی حسرت پہ برہم ہو گئے

کم سے پوری تو سنتے داستانِ آرزو

دل نہ کیوں کر خاطر تیرِ تمنا کی کرے

میزبانِ آرزو ہے میزبانِ آرزو

اے قمرؔ کیوں کر مٹاؤں اپنے دل سے دل کا داغ

یہ نشانِ آرزو ہے یہ نشانِ آرزو

قمر جلال آبادی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Saud Usmani