- Advertisement -

جوترے هجرکے غم هوتے هیں

فرانسس سائل کی ایک اردو غزل

جوترے هجرکے غم هوتے هیں
باخُدا لُطف وکرم هوتے هیں

هم وفاوالوں کے شانوں په میاں
سر نهیں هوتے علم هوتے هیں

درد محسوس نهیں کر سکتے
جیسے پتھر کے صنم هوتے هیں

ایک دشمن بھی بهت هوتا هے
دوست جتنے بھی هوں کم هوتے هیں

کون کهتا جونکل جائیں تو
آپ کی زُلف کے خم هوتے هیں

کوئی ندی هو که دریا هو کوئی
سب اُسی بحر میں ضم هوتے هیں

فرانسس سائل

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
افتخار شاہد کی ایک اردو غزل