A True Salam To Urdu Literature

Rakhiye Shagaf Rawayetoon Ke

A Ghazal By Shahid Zaki

رکھیے شغف روایتوں کے سلسلے سے بھی
لیکن کوئی خیال نے زاویے سے بھی

لگتا نہیں برا وہ کسی زاویے سے بھی
دیکھا اسے قریب سے بھی فاصلے سے بھی

مسمار کرکے آپ ہی اپنے مکان کو
بارش سے بھی جیت گیا زلزلے سے بھی

اک پھول نے اسیرِ زمیں کر دیا مجھے
میں تو اڑان سے بھی گیا گھونسلے سے بھی

تو نے ہمسفر مجھے اپنا بنا لیا
کیا بن سکے گی میری ترے قافلے سے بھی

اک مستقل سکوت ہے اک مستقل کلام
بے زار ہوں سنگ سے بھی آئینے سے بھی

شاہد کرے گا کون یقیں تیرے خواب کا
یہ لوگ تو مکر گئے تھے معجزے سے بھی.

شاہد ذکی

Leave A Reply

Your email address will not be published.

Recommended Salam
A Great Afsana By Dr Ishrat