- Advertisement -

Youn To Sheeraza-E-Jaan

An Urdu Ghazal By Abbas Tabish

یوں تو شیرازۂ جاں کر کے بہم اٹھتے ہیں

بیٹھنے لگتا ہے دل جوں ہی قدم اٹھتے ہیں

ہم تو اس رزم گہ وقت میں رہتے ہیں جہاں

ہاتھ کٹ جائیں تو دانتوں سے علم اٹھتے ہیں

سہل انگار طبیعت کا برا ہو جس سے

ناز اٹھتے ہیں ترے اور نہ ستم اٹھتے ہیں

کوئی روندے تو اٹھاتے ہیں نگاہیں اپنی

ورنہ مٹی کی طرح راہ سے کم اٹھتے ہیں

نیند جاتی ہی نہیں عرض ہنر سے آگے

دفتر غم ہی سدا کر کے رقم اٹھتے ہیں

دن کی آغوش رضاعت سے نکل کر تابشؔ

رات کی رات کف خاک سے ہم اٹھتے ہیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Anwar Masood