- Advertisement -

Nazroon Pe Sitam

An Urdu Ghazal By Shakeel Badayuni

نظروں پہ ستم دل پہ جفا ہو کر رہے گی

ہے جرم محبت تو سزا ہو کر رہے گی

اس درجہ ہو دل ان کی عنایت پہ نہ مسرور

اک دن یہی دو دن کی ہوا ہو کر رہے گی

اے رہروِ مے خانہ تو جنت کا غم نہ کر

جنت ترے قدموں پے فدا ہو کر رہے گی

اب تو غمِ جاناں بھی سکوں بخش نہیں ہے

کیا یہ خلش دل سے جدا ہو کے رہے گی

کیوں خوش نہ ہو دل بزم تصور کی بنا پر

دنیا تو نہیں ہے کہ فنا ہو کر رہے گی

احساس میں شامل ہے اگر حسنِ صداقت

آوازِ دل آوازِ خدا ہو کے رہے گی

اے حُسنِ پشیماں مری آنکھوں سے نہ گھبرا

ہر آہ ترے حق میں دُعا ہو کے رہے گی

برہم جو شکیل ان کی نظر ہو تو بلا سے

دیکھوں وہ کہاں مجھ سے خفا ہو کے رہے گی

شکیلؔ بدایونی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
ایک اردو غزل از دلشاد احمد