- Advertisement -

Darya Dili Kahoon Kya

An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi

دریا دلی کہوں تری کیا ساقیا کہ بس

پیمانہ اپنے منہ سے یہ خود بول اٹھا کہ بس

ذکرِ شبِ الم پہ کلیجہ پکڑ لیا

کچھ اور بھی سنو گے مرا ماجرا کہ بس

اللہ جانے غیر سے کیا گفتگو ہوئی

اتنا تو میں بھی آیا تھا سنتا ہوا کہ بس

گو سنگ دل وہ تھے، مگر آنسو نکل پڑے

اس بے کسی سے میرا جنازہ اٹھا کہ بس

اچھا تری گلی سے میں جاتا ہوں پاسباں

کچھ اور کہنے سننے کو باقی ہے یا کہ بس

شب بھر ترے مریض کا عالم یہی رہا

نبضوں پہ جس نے ہاتھ رکھا کہہ دیا کہ بس

دن ہو کہ رات رونے سے مطلب ہمیں قمرؔ

دل دے کے ان کو ایسا نتیجہ ملا کہ بس

قمر جلال آبادی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi