A True Salam To Urdu Literature

A Nazam By Ahmed Hamesh

Dilli Ki Ek Nazam By Ahmed Hamesh

دلّی کی ایک نظم
احمد ہمیش
بہت سی باتیں ہواؤں کے بارے میں نہیں کی جاسکتیں
کیونکہ انہیں نہ کرنا ہی اچھا ہے
اور جو براہے اس کی کوئی اہمیت نہیں
اہمیت ہوتی تو میں پہلا شخص ہوتا جو اسے ضرور کرتا
پھر خشک گھاس کا ہوا میں اڑنا
کسی ایسی ہوا میں اُڑنا جس پر پیغمبروں کی گزربسر تھی
اب کون جانتاہے کہ آدمیوں اور جانوروں کی تاریخ پر بیک وقت چلنا ہے،چلتے رہنا ہے
میرے کتے مجھے معاف کردے کہ میں نے خود سے زیادہ تجھے نہیں چاہا
ان لکڑی کے ٹکڑوں کے لئے جو کاغذکے گناہوں سے دور ہیں،جو سو نہیں سکتے
کیونکہ ان پر دھوپ گرتی ہے
یا وہ کائی جواگیّان کی سطح پر اُگتی ہے
جسے ہماری پہنچ سے اُڑنے والی کوئی چیز(آ پ کسی نامعلوم چڑیا کا نام لے سکتے ہیں)نہیں دیکھ سکتی
چلو چھوڑو،یہاں بیٹھتے ہیں
پر میں تو کہیں بیٹھنے کا ڈھنگ ہی نہیں جانتا
اسی لئے چلتاہوں،یہ جانتے ہوئے کہ میں چلنے کا ڈھنگ بھی نہیں جانتا
اسی لئے بیٹھ جاتاہوں۔۔۔۔
شاید وہاں دھوپ زیادہ تھی یا یہاں دھوپ کم ہے
یہاں کچھاور ہے یا کچھ اور نہیں ہے
شاید کوئی ایسی چیز جو تھپکی دے اور کہے کہ کسی نے کچھ نہیں لکھا
وہ تو ایک وہم ہے،انجانے طور پر نیند کو جلادیتاہے،کسی سوال کو سونے نہیں دیتا
ٍ چلو اُسے اٹھالیں
چلو خوش ہولو کہ کوئی گارہاہے
وہ جوآج تک گایا نہیں گیا
یہاں مت بولنا،چپ رہنا،یہ جانتے ہوئے کہ میں تم سے زیادہ کسی گالی کے سات ہزار تیور جانتاہوں
میں اسے بھی ہٹاسکتاہوں جسے ہٹانے کے لئے اپنے زندہ ہونے کا آڈمبر رچانا پڑتاہے
عدم وجود کے اس کال میں چلتے رہو،یہاں تک کہ تم سے کہلوایا جائے کہ تم روٹی اور پانی کا
مطلب نہیں جانتے
ایک جیتی جاگتی شہوت کو پہچان نہیں سکتے
چلو مان لیا کہ بہت کچھ یونہی ہوجاتاہے،پھر بھی بہت کچھ یونہی نہیں ہوتا،نہیں ہوتا،نہیں ہوتا،نہیں ہوتا
چاہے نامعلوم سے نامعلوم کے بیچ کوئی بے وقوف کتنی ہی کالی دھول کیوں نہ اُڑاے
مثلاً تم ٹھوکر سے نہیں کہہ سکتے کہ جوتے کی نوک سے سمجھوتہ کرلے
جوتے کی نوک تو ٹھوکر ہی ہوتی ہے
ایک معمولی کیل بھی ڈکٹیٹر ہوتی ہے
ایڑھی کی کھال میں چبھنے سے پہلے پوچھتی نہیں
یہ جانتے ہوئے کہ میں وہ ہوں جسے ا س کے پاؤں خوب جانتے ہیں
جینے کے لئے یہی کافی ہے یا یہ کافی نہیں ہے
میں نہیں جانتا کہ کوئی کیا دے سکتاہے سوائے اس کے کہ وہ کچھ لے نہیں سکتا
اور کون ہے جویہ دعویٰ کرے کہ اسے کچھ دیا گیا ہے
اور اس نے کچھ لیا ہے۔۔۔۔۔
مثلاً اگر رات ہوچکی ہے تو اس لئے نہیں کہ اسے ہونا تھا بلکہ اس لئے کہ اس کے ہونے سے پہلے بہت کچھ ہوچکا ہے
جن لوگوں کو آنا تھا وہ آنے سے بہت پہلے جاچکے ہیں
٭٭٭

Leave A Reply

Your email address will not be published.

Recommended Salam
A Funny Urdu Tehreer By Yousafi