- Advertisement -

Mera Paymbar Azeem Tur

مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

کمالِ خلّاق ذات اُسکی​
جمالِ ہستی حیات اُسکی​
بشر نہیں عظمتِ بشر ہے​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

وہ شرحِ احکامِ حق تعالٰی​
وہ خود ہی قانون خود حوالہ​
وہ خود ہی قرآن خود ہی قاری​
وہ آپ مہتاب آپ ہالہ​
وہ عکس بھی اور آئینہ بھی​
وہ نکتہ بھی خط بھی دائرہ بھی​
وہ خود نظارہ ہے خود نظر بھی​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

شعور لایا کتاب لایا​
وہ حشر تک کا نصاب لایا​
دیا بھی کامل نظام اسنے​
اور آپ ہی انقلاب لایا​
وہ علم کی اور عمل کی حد بھی​
ازل بھی اسکا اور ابد بھی​
وہ ہر زمانے کا راہبر ہے​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

ہر اک پیمبر نہاں ہے اس میں​
ہجومِ پیمبراں ہے اس میں​
وہ جس طرف ہے خدا ادھر ہے​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

بس ایک مشکیزہ اک چٹائی​
ذرا سے جو اک چارپائی​
بدن پہ کپڑے واجبی سے​
نہ خوش لباسی نہ خوش طباعی​
یہی ہے کل کائنات جسکی​
گنی نہ جائیں صفات جسکی​
وہی تو سلطانِ بحر و بر ہے​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے؎​

جو اپنا دامن لہو سے بھر لے​
مصیبتیں اپنی جان پر لے​
جو تیغ زن سے لڑے نہتا​
جو غالب آکر بھی صلح کر لے​
اسیر دشمن کی چاہ میں بھی​
مخالفوں کی نگاہ میں بھی​
امیں ہے صادق ہے معتبر ہے​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

جسے شہِ شش جہات دیکھوں​
اسے غریبوں کے ساتھ دیکھوں​
کدال پر بھی وہ ہاتھ دیکھوں​
لگے جو مزدور شاہ ایسا​
نہ زر نہ دھن سربراہ ایسا​
فلک نشیں کا زمین پہ گھر ہے​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​

وہ خلوتوں میں بھی صف بہ صف بھی​
وہ اس طرف بھی وہ اس طرف بھی​
محاذ و منبر ٹھکانے اس کے​
وہ سر بسجدہ وہ سر بکف بھی​
کہی وہ موتی کہیں ستارہ​
وہ جامعیت کا استعارہ​
مرا پیمبر (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) عظیم تر ہے​
***************​
مظفر وارثی​

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
افسانہ از منشی پریم چند