- Advertisement -

Kuch Khaak Chand Khaar

An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi

کچھ خاک چند خارِ مغیلاں لئے ہوئے

بستی کو جا رہا ہوں بیاباں لئے ہوئے

دونوں تھے سامنے بصد ارماں لئے ہوئے

میں دل لئے ہوئے تھا وہ پیکاں لئے ہوئے

اب تک تو میں نے کی تھی وفاؤں کی آرزو

اب تم پھرو گے دل میں یہ ارماں لئے ہوئے

او مرنے والے لے کے چلا ہے بس اک کفن

ایسا سفر اور اتنا سا ساماں لئے ہوئے

وہ صبح وصل کہتے تھے رخصت کو بار بار

میں چپ کھڑا تھا ہاتھ میں داماں لئے ہوئے

رسوا کروں گا دستِ جنوں کو گلی گلی

در در پھروں گا چاک گریباں لئے ہوئے

او آئینے کے دیکھنے والے ہمیں بھی دیکھ

ہم بھی کھڑے ہیں دل میں یہ ارماں لئے ہوئے

دیکھیں گے سیر گاہ وہ تاروں کی اے قمرؔ

نکلا ہے روشنی مہ تاباں لئے ہوئے

۔۔۔۔

وہ اگر بن سنور گئے ہوں گے

دیکھنے والے مر گئے ہوں گے

شامِ وعدہ اور انتظار ان کا

جانے وہ کس کے گھر گئے ہوں گے

تم بھی دیکھ آؤ مرنے والے کو

اب تو سب چارہ گر گئے ہوں گے

جب گری ہو گی باغ پر بجلی

اہلِ گلشن کدھر گئے ہوں گے

نیند آئی نہ ہو گی رات انہیں

نالے کیا بے اثر گئے ہوں گے

او سرِ راہ منتظر ان کے

وہ تو کب کے گزر گئے ہوں گے

تم بھی اہلِ جنوں کو پوچھتے ہو

کیا خبر ہے کدھر گئے ہوں گے

چاندنی کم یکا یک اتنی کیوں

بام سے وہ اتر گئے ہوں گے

قمر جلال آبادی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi