- Advertisement -

ہر نوکِ خار حسبِ تمنّائے عشق ہے

عارف امام کی اردو غزل

ہر نوکِ خار حسبِ تمنّائے عشق ہے
صحرا بہ قدرِ نقشِ کفِ پائے عشق ہے

پیروں میں آبلے ہیں بہ رنگِ سُپردگی
لالی لہو کی سرخئ صہبائے عشق ہے

ماتم کا شور و شین ہے، دھمّال سے بلند
دنیائے دل احاطۂ مولائے عشق ہے

پوچھے کوئی اسیر سے لطفِ خرامِ دشت
پیچا رسَن کا زلفِ زلیخائے عشق ہے

چہرے پہ خاک ڈال کے فرشِ عزا پہ چل
اس چاندنی کی گود میں صحرائے عشق ہے

وا ہو رہا ہے پردۂ زنگارئ وصال
بامِ سناں پہ قامتِ بالائے عشق ہے

دستِ زماں اُدھر تو اِدھر شانۂ مکاں
صحنِ ازل کے وسط میں دنیائے عشق ہے

میں بوریا لپیٹ کے دیکھا جو آئینہ
دیکھا بدن پہ اطلس و دیبائے عشق ہے

عکسِ جمالِ یار سے شیشہ ہے میرا دل
سینے کا زخم دیدۂ بینائے عشق ہے

کُھلنا ہر اک نگاہ پہ کب سہل ہے مجھے
مجھ پر نگاہِ نرگسِ شہلائے عشق ہے

عارف امام

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
عارف امام کی اردو غزل