- Advertisement -

Ghir Jaye Jo Deewar Tu

An Urdu ghazal by Faisal Ajmi

گر جائے جو دیوار تو ماتم نہیں کرتے

کرتے ہیں بہت لوگ مگر ہم نہیں کرتے

ہے اپنی طبعیت میں جو خامی تو یہی ہے

ہم عشق تو کرتے ہیں مگر کم نہیں کرتے

نفرت سے تو بہتر ہے کہ رستے ہی جدا ہوں

بے کار گزر گاہوں کو باہم نہیں کرتے

ہر سانس میں دوزخ کی تپش سی ہے مگر ہم

سورج کی طرح آگ کو مدھم نہیں کرتے

کیا علم کہ روتے ہوں تو مر جاتے ہوں فیصل

وہ لوگ جو آنکھوں کو کبھی نم نہیں کرتے

فیصل عجمی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu nazam by Faisal Ajmi