- Advertisement -

دل سے کوئی بھی عہد نبھایا نہیں گیا

ایک اردو غزل از سعد اللہ شاہ

دل سے کوئی بھی عہد نبھایا نہیں گیا
سر سے جمالِ یار کا سایا نہیں گیا

اک اک قدم پہ دشت بگولا بنا رہا
آنکھوں تک ایک نقش بھی لایا نہیں گیا

کب ہے وصالِ یار کی محرومیوں کا غم
یہ خواب تھا سو مجھ کو دکھایا نہیں گیا

ہاں ہاں نہیں ہے کچھ بھی مرے اختیار میں
ہاں ہاں وہ شخص مجھ سے بھلایا نہیں گیا

وہ شوخ آئنے کے برابر کھڑا رہا
مجھ سے بھی آئنے کو ہٹایا نہیں گیا

ہاں جانتا تھا آگ لگے کی ہر ایک سمت
لیکن چراغ مجھ سے بجھایا نہیں گیا

وہ بھی تھا خود پسند تو میں بھی تھا بد دماغ
بارِ انا کسی سے اٹھایا نہیں گیا

آساں نہیں حضور جدائی کا مرحلہ
ہم سے تو ہاتھ تک بھی ہلایا نہیں گیا

اڑتا رہا میں دیر تلک پنچھیوں کے ساتھ
اے سعدؔ مجھ سے جال بچھایا نہیں گیا

سعد اللہ شاہ

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
ایک اردو غزل از سعد اللہ شاہ