- Advertisement -

Kabab E Seeh Hain

Urdu Ghazal By Ameer Minai

کبابِ سیخ ہیں ہم کروٹیں ہر سو بدلتے ہیں
جو جل اٹھتا ہے یہ پہلو تو وہ پہلو بدلتے ہیں

سیہ پوشاک بن کر خانۂ کعبہ میں جا پہنچے
بلا کا بھیس او کافر ترے گیسو بدلتے ہیں

بہار آئی ہے صبحِ عید کا عالم ہے گلشن میں
نئی پوشاک شمشادِ کنارِ جُو بدلتے ہیں

نزاعِ کفر و دیں ہے دُور دَورِ زلف و عارض میں
مسلمانوں سے ٹوپی آج کل ہندو بدلتے ہیں

تری نیچی نگاہیں سایۂ مژگاں میں پھرتی ہیں
پرے میں جیسے بانکے پینترے ہر سو بدلتے ہیں

بہا میں کچھ تو پایا ہے انہیں اے چشمِ تر بہتر
جو اپنے موتیوں سے جوہری آنسو بدلتے ہیں

مئے کہنہ ہے یہ آبِ وضو تیرا نہیں زاہد
جو چشمے نُور کے ہیں کب وہ رنگ و بُو بدلتے ہیں

تری محفل میں یہ دیوار کی کہتی ہیں تصویریں
ادب سے بیٹھنے والے کہیں زانو بدلتے ہیں

امیرؔ اس باغ میں رہ کر کریں کیا دم الجھتا ہے
نہ نخوت چھوڑتے ہیں گُل نہ کانٹے خُو بدلتے ہیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
A Urdu Ghazal By Ameer Minai