آپ کا سلاماردو غزلیاتشعر و شاعری

عجب ہے کاغذِ قسمت

سید محمد وقیع کی ایک غزل

عجب ہے کاغذِ قسمت عجب اس پر لکھائی ہے
ہے دردِ غم قلم اس کا لہو کی روشنائی ہے

مرے زخموں کا مرہم ہے اسے پھر سے ہرا کرنا
انوکھا طرز ہے میرا عجب میری دہائی ہے

سلامت یوں نہیں رہ سکتا گل پر موتیٔ شبنم
گلوں سے گر کے مر جانا ہی شبنم کی رہائی ہے

سحر کے رات کے جیسے نہیں رُکتی مرے در پر
یہ قسمت اپنی ہو کر بھی مجھے لگتی پرائی ہے

رگوں میں خون کے اندر سسکتی آس ہے کوئی
یہی ۔۔ میرے بدن کے ساز کی نغمہ سرائی ہے

کلیجہ چیرتا ہے دن کو سورج شدتِ غم سے
مگر مزدوری کرنی ہے یہی واحد کمائی ہے

مرے جذبوں کے پروردہ مجھے اشعار پیارے ہیں
مرے ہر لفظ کی سسکی وقیع ان میں سمائی ہے

 

سید محمد وقیع

سید محمد وقیع

سید محمد وقیع تخلص وقیع رہائش اورنگی ٹاون کراچی تاریخِ پیدایش جون 2004

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button