آپ کا سلاماردو غزلیاتشعر و شاعریعامر ابدال

شَفَقِ بے کنار پھیل ذرا

ایک غزل از عامر ابدال

شَفَقِ بے کنار پھیل ذرا
قلزمِ چشمِ یار پھیل ذرا

نرم پوروں کے لمس جسم کے گرد
باندھ اپنا حصار پھیل ذرا

سبزگی چار دن تو ہو باقی
فصلِ بے اعتبار پھیل ذرا

میں تلاشوں گا پیاس کے موتی
حال کے ریگ زار پھیل ذرا

جیبِ لیلی ہو مثلِ دامنِ قیس
بَن میں آ تار تار پھیل ذرا

میری صف اے مری اجَل نہ سمیٹ
پھیل کچھ انتظار پھیل ذرا
ٍ
خارِ دشتِ جنوں تمہاری خیر
دل تلک زہرِ خار پھیل ذرا

فی زمانہ خلیلِ عشق ہوں میں
مجھ پہ نمرودی نار پھیل ذرا

یدِ بیضا کی انگلیاں ترسیں
گیسوئے مشکبار پھیل ذرا

سایہ بھی میرے ساتھ ہے ابدال
شام ہوتی ہے دار پھیل ذرا

عامر ابدال

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button