- Advertisement -

تیر نظروں کے ہم پہ چلاتے رہو

جیوتی آزاد کھتری کی ایک اردو غزل

تیر نظروں کے ہم پہ چلاتے رہو

جھوٹی الفت سہی پر جتاتے رہو

اس طرح پیار مجھ سے نبھاتے رہو

دل میں خوشبو کے جیسے بساتے رہو

میں خفا ہوں کبھی تم خفا ہو کبھی

پیار کا سلسلہ یوں بڑھاتے رہو

میں نے تو لکھ دیا نام دل پہ ترے

گر مٹانا ہو ممکن مٹاتے رہو

آ نہ جائے گماں مجھ میں جھوٹا کوئی

تم حقیقت کا درپن دکھاتے رہو

پتھروں کو نہ احساس ہوگا کبھی

رات دن اشک چاہے بہاتے رہو

جیوتی آزاد کھتری

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
ذوالفقار عادل کی ایک اردو غزل