- Advertisement -

آنکھ میں رَتجگا تو ہے ہی نہیں

ایک اردو غزل از شبیرنازش

آنکھ میں رَتجگا تو ہے ہی نہیں
ہجر کا تذکرہ تو ہے ہی نہیں

مِل گیا تُو، تو مِل گیا سب کچھ
اور کچھ مانگنا تو ہے ہی نہیں

ایک ہی راستہ نجات کاہے
دوسرا راستہ تو ہے ہی نہیں

عکس مجھ کو دِکھا رہا ہے کون؟
سامنے آئنہ تو ہے ہی نہیں

معذرت کر نہ بے وفا کہہ کر
اب مجھے ماننا تو ہے ہی نہیں

یہ مرض عشق کا مرض ہے میاں !
اِس مرض کی دوا تو ہے ہی نہیں

آپ اپنوں میں اب نہیں شامل
آپ سے اب گلہ تو ہے ہی نہیں

دوستوں پر یقین پُختہ ہے
دشمنوں پر شُبہ تو ہے ہی نہیں

شبیرنازش

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
ایک اردو غزل از شبیرنازش