آپ کا سلاماردو غزلیاتسمیر شمسشعر و شاعری

یہاں چراغ مقابل ہَوا کے بات کریں

سمیر شمس کی اردو غزل

یہاں چراغ مقابل ہَوا کے بات کریں
جنھیں ہے جراتِ اظہار آ کے بات کریں

یہی سلیقہ ہے دنیائے مے کشی کا دوست
حضورِ ساقی سبھی سر جھکا کے بات کریں

جنھیں شعور نہیں بولنے کا آیا ابھی
زباں دراز وہ آگے خدا کے بات کریں

لہو سے جسم کو حدّت اگر ذرا سی مِلے
تَو کیوں نہ دیدۂ و دل خوں بہا کے بات کریں

جنھیں نہ شوقِ شہادت نہ ذوقِ حق گوئی
وہ کیسے سامنے فرما روا کے بات کریں

ہمیں سلیقۂِ آوارگی نہیں آتا
وگرنہ راستے بھی سر جھکا کے بات کریں

مزاجِ شہر سمیرؔ آج تک نہیں بدلا
تمام لوگ ابھی سنگ اٹھا کے بات کریں

سمیرؔ شمس

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button