آپ کا سلاماردو غزلیاتشعر و شاعریشعیب شوبی

وضع اِنساں میں مخفی ہیں

شعیب شوبیؔ کی ایک اردو غزل

وضع اِنساں میں مخفی ہیں جو حیواں نہیں ہو سکتے
ہم خُلد کے لائق ہیں مُسلماں نہیں ہو سکتے

بے فیض سی دنیا میں عبث آئے ہیں ہم ، لیکن
جن راہوں پہ پاؤں دھریں سنساں نہیں ہو سکتے

قربت و جدائی کے کرشمات تو ہیں اس میں
اس فعلِ زِیاں میں کبھی نقصاں نہیں ہو سکتے

میں تیری مَعیت میں چلا تھا جنوں کی جانب
کھو کے مجھے تم اب کہ پشیماں نہیں ہو سکتے

روئیں گے نہ تڑپیں گے نہ جاگیں گے جدا ہو کر
ہم یوں ہی ہنسیں گے کہ پریشاں نہیں ہو سکتے

میں جن کی مَعیت میں چلا ہوں جنوں کی جانب
حاکم ہوں گے میرے وہ نگہباں نہیں ہو سکتے

ہاں ٹھیک گنہ گار تھا تیرا میں مگر شوبیؔ
تو نے دھرے ہیں مجھ پہ جو بُہتاں نہیں ہو سکتے

شعیب شوبیؔ

شعیب شوبی

اصل نام: محمد شعیب قلمی نام: شعیب شوبی تخلص:شوبی پیدائش:14 اپریل 2000 ء گاؤں صاحبہ بلوچاں، تحصیل ساہی وال ضلع سرگودھا تعلیم: بی ایس اردو 22-2018 ( یونیورسٹی آف سرگودھا ) مستقل پتہ: گاؤں صاحبہ بلوچاں تحصیل ساہی وال ضلع سرگودھا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button