اردو غزلیاتڈاکٹر صباحت عاصم واسطیشعر و شاعری

وقت بے وقت یہ پوشاک مری تاک میں ہے

ڈاکٹر صباحت عاصم واسطی کی ایک اردو غزل

وقت بے وقت یہ پوشاک مری تاک میں ہے

جانتا ہوں کہ مری خاک مری تاک میں ہے

مجھ کو دنیا کے عذابوں سے ڈرانے والو

ایک عالم پس افلاک مری تاک میں ہے

سانپ ہر دشت میں کرتا ہے تعاقب میرا

بحر بے آب کا تیراک مری تاک میں ہے

جمع کرتا ہے شواہد مرے ہونے کے خلاف

در حقیقت مرا ادراک مری تاک میں ہے

ہے مرے گرد حفاظت کے لیے ایک حصار

ہو اگر کوئی غضب ناک مری تاک میں ہے

اس سے کہنا مجھے حاصل ہے تحفظ غیبی

جو پس پردۂ بے چاک مری تاک میں ہے

وہ تو یوں ہے کہ بچاتا ہے بچانے والا

ورنہ اک لشکر سفاک مری تاک میں ہے

اک طرف روح وضو میں نہیں ہوتی شامل

اک طرف سجدۂ ناپاک مری تاک میں ہے

آشنا ایک ہے اس شہر میں عاصمؔ میرا

اور وہ دشمن بیباک مری تاک میں ہے

ڈاکٹر صباحت عاصم واسطی

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button