- Advertisement -

Un Py Zahir Mery Unwaan

An Urdu Ghazal By Qamar Jalalabadi

اُن پہ ظاہر مرے ارماں کسی عنواں ہوتے

میں نہ کہتا بھی آنکھوں سے نمایاں ہوتے

کیوں نہ رہنے دیا سردوش عدو پر اپنا!

تیرے گیسو تو نہ تھے ہم جو پریشاں ہوتے

موت نے روک دئے اشکِ مریض شبِ غم

یہ وہ تارے تھے جو دن کو بھی نمایاں ہوتے

کون دیوانہ انہیں چین سے رہنے دیتا

پھول اگر میری طرح چاک گریباں ہوتے

رات کیوں بال بکھیرے تھے نہ پوچھا میں نے

خواب کی بات تھی سرکار پریشاں ہوتے

اے قمر ہجر کی شب کٹ گئی دھوکہ ہے تمہیں

صبح ہوتی تو ستارے نہ درخشاں ہوتے

قمر جلال آبادی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu ghazal by Faisal Ajmi