- Advertisement -

Shaam Khizaa Ki

An Urdu Ghazal By Saghar Saddiqui

ساغر صدیقی
انتظارِ نظر

شام خزاں کی گم صم بولی

جیون لمحے زہر کی گولی

میرے آنسو اور ستارے

کھیل رہے ہیں آنکھ مچولی

دو پھولوں کی خاطر ترسیں

آج بہاروں کے ہمجولی

چاند کا سایہ چھت سے اترا

ہمسائے نے کھڑکی کھولی

توڑ دیا دم دیوانوں نے

عمر جنوں کی پوری ہو لی

پھول بھی ہے وہ کانٹا بھی ہے

من میلا ہے صورت بھولی

لمبی ہے تقدیر کی ڈوری

کس نے ناپی کس نے تولی

اپنی دنیا رین بسیرا

اپنی دولت خالی جھولی

جسم کا زنداں روزن روزن

جب بھی چاہا سوئی چبھو لی

میرے شعروں کا مجموعہ

مست خراموں کی اک ٹولی

خاکِ درِ میخانہ ہم نے

ساقی پیمانوں میں گھولی

پتے بھی اشجار کے نغمے

سائے ہیں دیوار کی بولی

چھینٹ غمِ عصیاں کی ساغر

ہم نے شرابِ ناب میں دھو لی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
An Urdu Ghazal By Saghar Saddiqui