اردو نظمرام پرساد بسملشعر و شاعری

سر فروشی کی تمنا

رام پرساد بسمل کی ایک اردو نظم

سر فروشی کی تمنا اب ہمارے دل میں ہے
دیکھنا ہے زور کتنا بازو-اے-قاتل میں ہے۔

کرتا نہیں کیوں دوسرا کچھ بات چیت
دیکھتا ہوں میں جسے وو چپ تری مہفل میں ہے۔

اے شہیدے-ملکو-ملت میں تیرے اوپر نثار
اب تیری ہمت کا چرچہ غیر کی مہفل میں ہے

وقت آنے دے بتا دینگے تجھے اے آسماں
ہم ابھی سے کیا بتائیں کیا ہمارے دل میں ہے

کھینچ کر لائی ہے سب کو قتل ہونے کی امید
عاشقوں کا آج جمگھٹ کوچا-اے-قاتل میں ہے

یوں کھڑا مقتل میں قاتل کہ رہا ہے بار بار
کیا تمنا-اے-شہادت بھی کسی کے دل میں ہے

(ملت=لوک، کوچا=گلی، مقتل=قتل گاہ)

نوٹ=اس رچنا دے کوی بسمل عظیم آبادی ہن
پر مشہور ایہہ رام پرساد بسمل دے ناں نال ہی ہے

 

رام پرساد بسمل

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button