- Advertisement -

پیشین گوئی

ڈاکٹر وحید احمد کی ایک اردو نظم

پیشین گوئی

صاف آثار نظر آتے ہیں
اس کے آنے کی علامات بہت روشن ہیں
اب تو بس اتنی کہانی ہے کہ وہ آئے گا
ایک سے ایک نشانی ہے
کہ وہ آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جب آتا ہے تو سورج میں مچل آتی ہے،
اور وہ آ رہی ہے۔
وہ جب آتا ہے تو تاروں میں سجل آتی ہے،
اور وہ آ رہی ہے۔
وہ جب آتا ہے تو ماحول میں چھل آتی ہے،
اور وہ آ رہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کو پانی نے پکارا ہے، بڑے پانی سے۔
پانی
جو ثابت و سیار کی سرکار ہوا کرتا ہے۔
پانی کہتا ہے
مرے پانیوں میں آنسو ہیں۔
آب گم کی طرح اندر کی طرف بہتے ہیں۔
پانی کہتا ہے مرے پانیوں میں غاریں ہیں۔
شور زادے مری چوکھٹ پہ پڑے رہتے ہیں۔
اس کو پانی نے پکارا ہے
سو وہ آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آگ نے اس کو اشارہ کیا پرکالے سے۔
آگ
جو شعلگی ء ارض و سماوات ہوا کرتی ہے۔
آگ کہتی ہے میں ہر بات میں ہوں۔
آگ کہتی ہے میں بہتات میں ہوں۔
میں تناسب سے کہیں بڑھ کے ہوئی ہوں انگیخت
آگ کہتی ہے میں افراط میں ہوں۔
آگ کا اس کو اشارہ ہے
سو وہ آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کو مٹی کا بلاوا سو وہ آئے گا۔
مٹی
جو روح کا پہناوا ہے۔
مٹی کہتی ہے زبوں حالی ہے۔
مٹی کہتی ہے اچھالی گئی ہوں
گرد بن کر سر افلاک پہ ڈالی گئی ہوں۔
خاک ساری کا بلاوا ہے
سو وہ آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صنعت روح تراشی و کشیدہ کاری
وہ جو انفاس کو جھونکوں سے بنا کرتی ہے۔
ہچکیاں لیتی ہوا نے اسے بنتی کی ہے
رو کے کہتی ہے مری سانس رکی جاتی ہے۔
روح عالم نے پکارا ہے
سو وہ آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پیش گوئی ہے وحید احمد کی
ایک ہنگامہ ء پیغام الست آئے گا۔
وہ بلا خیز، شعاع ریز، نظارہ انگیز
وہ زبردست
جنوں دست بدست آئے گا۔
صاف آثار نظر آتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وحید احمد

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
یونس متین کی ایک اردو نظم