- Advertisement -

ماٸے نی

یونس متین کی ایک اردو نظم

ماٸے نی

ماٸے نی ۔۔۔۔۔ تری یاد ستاوے اُٹھ قبراں چوں آجا
ماٸے نی ۔۔۔۔۔ میں کرماں ہاری آ مرے لیکھ جگا جا

ماٸے نی ۔۔۔۔۔ ہُن کِنوں جا کے اپنا حال سناواں !
ماٸےنی ۔۔۔۔۔۔ ہُن کیڑا منگے ساڈے لٸی دعاواں !

ماٸےنی ۔۔۔۔۔ میں کلی رہ گٸی غماں نے گھیرا پایا
ماٸےنی ۔۔۔۔۔ میں دکھ مِتراں دا ہڈاں وچ ہنڈایا

ماٸے نی ۔۔۔۔ مِرا ویہڑا سُنّا ، وچ رو وے اکلاپا
ماٸےنی ۔۔۔۔۔ میں رنڈی ہوگٸ چُوڑا کرے سیاپا

ماٸے نی ۔۔۔۔۔ مِرے کیس نکھتے رورو ہسدےہاسا
ماٸے نی ۔۔۔۔۔ گل لگ ُبلھیاں دے وین کرے دنداسا

ماٸے نی ۔۔۔۔۔ ساڈے پَلے پَے گیا ازلاں دا سنّاٹا
ماٸے نی ۔۔۔۔۔ اساں لاشاں ڈھو ڈھو چِٹاکر لیا جھاٹا

ماٸے نی۔۔۔۔۔ جگ جین نہ دیندا زہری اِس دا ہاسا
ماٸے نی ۔۔۔۔۔ سانُوں پیا ہنڈانا قبراں تک رنڈاپا

ماٸے نی ۔۔۔۔۔۔ تک باجھ تِرے میں رو واں تےکرلاواں
ماٸے نی ۔۔۔۔۔ تُوں قبریں ٹر گٸی ، کِنوں درد سناواں

ماٸے نی ۔۔۔۔۔۔ ہُن کیہڑا بھر بھر چھنے دُدھ پلاٸے
ماٸے نی ۔۔۔۔۔۔ ہُن کون بھلاچُنیاں نُوں گوٹے لاٸے

ماٸےنی ۔۔۔۔ جے تُوں اج ہو ویں گل لگ تیرے رو واں
ماٸےنی ۔۔۔۔۔ میں روندی روندی گود تری وچ سو جاں

ماٸے نی۔۔۔۔۔۔ نی میرٸیے ماٸے ! اُٹھ قبراں چوں آجا
ماٸے نی۔۔۔۔ اج متھا چُم کے میرے درد ونڈا جا !!!!

یونس متین

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
میر تقی میر کی ایک غزل