- Advertisement -

ماں تیری ممتا

عفرا عبد الکریم کا کی اردو تحریر

ماں تیری ممتا

وہ کاغذ کا ٹکڑا لئے دیوانہ وار گھوم رہا تھا۔
’’اؔوارہ‘‘
کسی نے گزرتے ہوئے کہا۔
اسے کوئی بھی اؔوارہ کہہ سکتا تھا۔ پراگندہ بال، خوفناک حال، گرد میں اٹا ہوا چہرہ، بےسلیقہ داڑھی، چہرے کے بگڑے ہوئے نقوش میں بھی کہیں ناکہیں اسکا وقار جھلک رہا تھا۔
مگر وہ دنیا و مافیا سے بےخبر سماعتوں، بصارتوں پہ صم، بکم کے قفل لگائےچلتاہی جا رہا تھا۔اسکا ایک ایک قدم، ماضی کے دھندلکوں کو گرد اؔلود کئے جا رہا تھا اور ہربڑھتا ہوا قدم کسی انجان منزل کی جانب اٹھ رہا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکی حسب معمول متلاشی نگاہیں اؔکسفورڈ سکول کے سامنے نت نئے چہروں میں سے کسی کی کھوج میں تھیں۔ وہ میلے کپڑوں میں، دودھیارنگت لئے، خوبصورت ترچھے نقوش کی مالک، باوقار انداز میں کھڑی اؔج بھی اتنی ہی خوبصرت تھی جتنی کہ دس سال قبل۔
پسینے سے شرابور، بےچینی سے دوپٹے کے پلو کو انگلیوں کےگرد لپیٹتی اور کبھی کھول دیتی۔ اچانک اسکے چہرے پر پریشان سے تاثرات سکون میں ڈھل گئے۔ اسکی اؔنکھیں خوشی سے جگمگائیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر پر محبت بھرا لمس محسوس کرتے ہوئے اس نے اؔنکھیں کھولیں اور دیکھا کہ اسی کی طرح بگڑے ہوئے حلیے کا کوئی بزرگ اسے اپنی پیار بھری نگاہوں کےحصار میں لئے اسکے سر پر محبتوں اور شفقتوں بھرا ہاتھ پھیر رہے تھے۔
صحرا میں جھلستےاس پیڑتلے وہ صبح کے کتنے لمحات گزار چکا تھا، اسے بلکل بھی اندازہ نہ ہوا۔یہاں وہاں دیکھنے کے بعد کاغذ کا ٹکڑا اپنے پاس موجود پاتے ہی اسے سب صاف دکھائ دینے لگا۔اسکی متضاد اؔنکھوں سے اشکوں کی ندیاں ابل پڑیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارہاب!!!
وہ پیاسوں کی طرح اپنے بیٹے کی جانب بڑھی، مگر بیٹے کے چہرے پر اؔج بھی حقارت کے تاثرات نمایاں تھے۔
مرحا نے بیٹے کے تاثرات کو ہمیشہ کی طرح نظر انداز کرتے ہوئے اسکا ہاتھ تھاما اور قریب ہی کھڑے قلفی والے سے قلفی دلوائ۔
دھوپ کی تپش دونوں پر یکساں تھی مگر ارہاب کے سر پر ماں کی محبت کا سائہ تھا۔ مرحا کی نگاہ اؔج بھی دوسری جانب شربت والے ٹھیلے پر پڑی مگر فورا اسے نظرانداز کرتے ہوئے اسنے اپنے پیاسے حلق کو ہمیشہ کی طرح ڈانٹا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نفرتوں کے ایندھن پر، محبتوں کے لالٹین میں جلی ہوئ میٹھی اؔگ سے، شفقت کی تیلی کو سلگا کر، اخلاص کی اؔگ سے چولہا جلاو۔ رحم کی ہنڈیا میں جہاں بھر کے شہد کی مٹھاس کو انڈیلو، باد نسیم سی نرمیشبنم سی پاکیزگی،ساگر سی گہرائ، پھولوں سی مہک اور تتلی سی حساسیت و لطافت کو شامل کر کے احساس کا تڑکا لگاو۔ پھر ایثار کے ڈھکن سے ڈھانپ دو۔ عنایتوں اور ریاضتوں کی ہر طرف پھیلی بھینی بھینی خوشبو محسوس کرو توایک لفظ ’’ماں‘‘ تیار ہوتا ہے۔
مجذوب اپنی دھن میں مگن بول رہے تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارہاب جب بھی مرحا کو دیکھتا تو جہاں بھر کا قہرا سکی نگاہوں میں اتر اؔتا۔ حقارت اسکے چہرے سے عیاں ہوتی۔ مرحا چار گھروں میں مسلسل کام کر کے دو اؔنے کماتی اور روز کی اؔدھی کمائ اپنےطلال پر لگا کر اسے قلفی کھلاتی کہ میرطاہیرا دن بھر گرمی میں پڑھائ کی مشقت کےبعد مجھ سے ملتا ہے۔
خیر دن گزرتے گئے، جوں جوں ارہاب کی تعلیم کا درجہ بڑھ رہا تھا مرحا کی عمر کے ساتھ ساتھ اسکی محنت میں بھی اضافہ ہو رہا تھا۔ مرحا اسی اضطراب سے ادھر ادھر اپنے بیٹےکی خاطر مشقت کیلئے دوڑی جیسےحضرت ہاجرہ دوڑیں۔ مگر وہ ہاجرہ کی ممتا تھی جسے رکن عبادت ٹھہرایا گیا۔ دن رات ایک کرکے مرحا نے اپنے لال کو ایم بی بی ایس کیلئے انگلینڈ بھیج دیا اور خود فاقوں پہ عمر گزارنے لگی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مگربابا۔ ۔ ۔
خشک حلق سے موہوم سی اؔوازاؔئ۔
’’میں نے اپنی ماں کا ہرلمحہ دل دکھایا۔ وہ میری پیار بھری نگاہ کی خواہاں، دن میں کئ بارمیری نفرتوں کےنشتر سہتی، وہ ایک دن میں کئ بارمرتی تھی۔ یہ اسی کا نتیجہ ہے کہ میں دنیا کی ہر نعمت ہونے کے باوجود محروم زمانہ ہوں، مجھے پل بھی چین نہیں‘‘۔
’’ماں کی دعا انسان کو گوہر نایاب بناتی ہے۔ محمد بن اسماعیل نابینا پیدا ہوئے یہ انکی ماں کی دعا تھی کہ انہیں بصارت و بصیرت اتنی ملی کہ وہ امام بخاری بن کردنیا کے سامنے اؔئے۔
یہ ممتا بھری دعاہی ہےجو موسی علیہ السلام کے دور کےبمعمولی قصائ کودنیا میں جنتی ٹھہراتی ہے۔ یہ ماں ہی ہےجو سدیس نامی شریر بچےکو امام کعبہ بناتی ہے۔
بایزید بسطامی کو ماں کی دعا ہی کی بدولت ولایت نصیب ہوئ۔
یہ تمہاری ماں ہی کی محبت بھری دعائیں ہیں کہ تمہارے نام کیساتھ اؔج ڈاکٹر لگ چکاہے۔
مجذوب بابا قوت گویائ کا بھرپور استعمال کر رہے تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارہاب جب انگلینڈ سے واپس لوٹا تو وہ ڈاکٹر ارہاب سکندر بن چکا تھا۔ اسکے پاس ہردفعہ کامیابی سے ملنے والے پیسوں سے اتنا روپیہ جمع ہو چکا تھا کہ اسکا گھر عالیشان بنگلہ بن گیا۔ اسکا ذاتی ہسپتال بن گیا۔ اؔج ارہاب کی پے در پے ہونے والی کامیابیوں پر پارٹی تھی۔ پاکستان کا بڑے سے بڑا ڈاکٹر اس تقریب میں شامل تھا کہ نہایت گندے حلیے میں ایک بڑھیا پاس سے گزری۔
’’ارہاب صاحب!انکاتعارف‘‘؟؟؟؟؟؟؟
یہ ڈاکٹر رافع تھے۔
یہ میری ملازمہ ہیں۔ ڈاکٹر ارہاب ایک سیکنڈ کو بوکھلائے مگر فور اسےخود کو مینٹین کیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کاش!میں اپنی ماں کو اسکی موجودگی میں سکھ دے پاتا۔
کاش میں اسکی ممتا کی تڑپ محسوس کر سکتا۔
کاش !میری ماں مجھ سے راضی ہوتی۔
کاش!!!
اے کاش!!!

————————————–
مرحا فور اپنے سٹورنما کمرے میں اؔئ اور بے اختیار رو دی اور اس قدر روئ کہ اسکی سانسیں اکھڑنے لگیں۔ ارہاب کسی اؔواز کی تقلید میں دروازے تک پہنچا تو مرحا اؔخری سانسیں گن رہی تھی۔ موت کے وقت تو غی ربھی ترس نچھاور کرتے ہیں۔ انگلینڈ سے واپسی پر اؔج پہلی بار ارہاب نے اس کمرے میں قدم رکھا جو گرد سے اٹا ہوا تھا۔
ہرطرف جالوں کا بسیرا، گھر سے دور کہیں جنگل میں برسوں پرانی غار کی مانند تھا، دھیمی سی روشنی میں اسنے ماں کو تکیے کی طرف اشارہ کرتے دیکھا۔ مرحا کے ہونٹ ہل رہے تھے ارہاب نےکان لگا کر سننے کی کوشش کی۔
’’بیٹا! یہ میرا وقت الوداع ہے۔ میری موت کے بعد کبھی میری یاد اؔئے تو اس تکیے تلے موجود کاغذ کو پڑھ لینا۔ یہ تمہارے لیے دلاسہ ہوگا_
لا الہ الا اللہ”
مرحا کےسانسوں کی مالا مکمل طور پر ٹوٹ چکی تھی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہارے بابا شہر کے نامور ڈاکٹر تھے اور میں میٹرک پاس۔ میں وہ لڑکی تھی کہ جسکے معیار پہ اؔج تک کوئ نا اتر پایا۔ میں خوبصورتی میں بھی قابل داد تھی۔ تمہارے بابا نے مجھےخوش رکھنےکی ہرممکن کوشش کی۔ ہم ایک روزسیر کیلئے نکلے تھے کہ ہماری گاڑی کا ایکسیڈینٹ ہوا اور اتنا شدید ہوا کہ تمہاری ایک اؔنکھ نوکیلے پتھر سے لگی اور میں دوسری سمت گرکر بے ہوش ہو چکی تھی۔ ہوش میں اؔتےہی خودکو ہسپتال میں پایا۔ تمہارے بابا انتقال کر گئے۔
تم کہا کرتے تھے ناماں مجھے تم سےخوف اؔتاہے؟
تمہاری اؔنکھ کتنی بھیانک ہے؟ کتنی خوفناک ہے؟
تم کہتے تھے ناکہ ماں جب تم میرے ساتھ ہوتی ہو تو لوگوں کی تمسخرانہ نگاہوں کی شدت میرے لیے ناقابل برداشت ہوتی ہے ؟
ماں میں تمہاری وجہ سے سراٹھا کر نہیں جی سکتا۔
میری بصارت تو تم خود ہو میرے لال مجھےدنیا کی رنگینیوں سےکیا مطلب؟
تمہاری ایک اؔنکھ بلکل ضائع ہو گئ اور اسکے بدلے میں نے تمہیں اپنی اؔنکھ دی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ وہی ڈاکٹر ارہاب سکندر تھے جو ملک بھر میں نامور تھے۔ کتنے ہی اولڈ ہاوسز انکے ماتحت تھے مگر اؔج بلکل تنہا تھے۔ اؔج انکے پاس وہ ماں نہ تھی جو انکے ہرغم کو ایک بوسے سے جذب کرلیتی۔
وہ ماں نہ تھی جو انکی خاطر سمندروں سے ٹکرا جاتی۔
وہ ماں نہ تھی جسےدیکھتے ہی انہیں سکون مل جاتا۔
اؔج انکے پاس ندامت تھی، پشیمانی تھی، شرمندگی اور پچھتاوا تھا مگر’’ماں‘‘نہ تھی۔
ایڈیاں گوڑیاں جگ تے چھاواں لبھدیاں نئیں
ٹر جاون اک وار تے___ ماواں لبھدیاں نئیں

عفرا عبد الکریم

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
بریرہ خان کا اردو کالم