اردو شاعریاردو نظمڈاکٹر وحید احمد

کوہسار یونیورسٹی

ڈاکٹر وحید احمد کی ایک اردو نظم

کہیں کوہ پیمائی دانش کے باب انا میں لکھا ہے
کہ ہموار رستوں پہ چلنا۔۔۔۔۔ بھلا کوئی چلنا ہے۔۔۔۔۔۔!!؟
اس سے تو بہتر ہے
بیٹھے رہیں
یا دھڑکتی عمارت کی بل دار اور گونجتی سیڑھیاں چڑھتے جائیں
کہ بے فیض راہوں پہ چلنا تو قدموں کی بے حرمتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہاڑوں کے راہی
کہ سب کوہساری عقیدے پہ ایمان رکھتے ہیں،
کہتے ہیں
رستے اتالیق ہیں۔
ہر قدم اک سبق
ہر دھمک اک رمق
اور ہر چاپ میں منطق الطیر کی وادیاں گونجتی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کٹیلی چڑھائی کی اترن، چڑھائی ہے
اترائی ہرگز نہیں ہے۔
سو بالا بلندوں کی لغزش بہت عارضی ہے
اسے درگزر کیجئے صاحبا ۔۔۔۔۔۔!!!
کٹیلی ڈھلانوں کی گمراہ کن اور فریبی چڑھائی،
چڑھائی نہیں ہے۔
ڈھلانیں ثریا کی آنکھوں سے تحت الثری دیکھتی ہیں۔
اسی واسطے
پھن کی رفعت میں پھنکارتی دل ربائی ہے۔
کنڈل مگر کسمساتا ہے،
پاتال میں جھانکتا ہے۔
حذر کیجئے
اور فرومایہ کی دل فریبی سے صرف نظر کیجئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ پہاڑوں کے بیٹے
بہت علم والے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ زندیق ہیں۔
اور کیسے نہ ہوں،
راستے ظالموں کے اتالیق ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وحید احمد

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button