آپ کا سلاماردو شاعریاردو غزلیاتسمیرا ساجد

خوشی سے دل بھی نہال ہوتا

سمیرا ساجد کی ایک اردو غزل

خوشی سے دل بھی نہال ہوتا
اگر تعلق بحال ہوتا

بچھڑ کے مرنا تو عام شے ہے
بچھڑ کے جینا کمال ہوتا

ترے اشارے سے عشق میرا
ہنسی خوشی پائمال ہوتا

نہ تیرے لفظوں کے تیر لگتے
نہ میرا لہجہ نڈھال ہوتا

بس اپنے بارے جو سوچتا ہے
اسے مرا بھی خیال ہوتا

مرے مقدر کے روز و شب میں
کوئی ملن کا بھی سال ہوتا

وہ لوٹ آتا تو کیوں سمیرا
مری وفا پر سوال ہوتا

سمیرا ساجد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button