آپ کا سلاماردو شاعریاردو غزلیاتحافظؔ زین العٰابدین

کبھی کبھی مجھے کچھ بھی

حافظؔ زین العٰابدین کی ایک اردو غزل

کبھی کبھی مجھے کچھ بھی بھلا نہیں لگتا
جہاں چلوں وہ مرا راستہ نہیں لگتا

جو میرے ساتھ چلے ہیں وہ میرے ساتھ نہیں
یہ سلسلہ مجھے وہ سلسلہ نہیں لگتا

میں سچ کہوں گا اگر تم مجھے قسم دے دو
میں کچھ کہوں تمہیں بالکل بُرا نہیں لگتا

پہاڑ عمر نجانے کٹے گی بھی کہ نہیں
جلا ہے دل میں دیّہ جو بجھا نہیں لگتا

تمام شہر سے بُو آ رہی ہے مقتل کی
جو جس طرح ہے مجھے اُس طرح نہیں لگتا

حافظؔ زین العٰابدین

حافظ زین العابدین

حافظؔ زین العٰابدین ۔ جائے پیدائش ۔ قصور، پنجاب نو سال کی عمر میں حفظِ قرآن کرنے کے بعد اپنی دنیاوی تعلیم کا آغاز کیا ۔ پنجاب کالج قصور سے انٹر کے بعد اب فیملی بزنس سنبھال رہا ہوں۔۔۔ شاعری کا آغاز آٹھ برس قبل کیا ۔۔۔ پہلا شعری مجموعہ اشاعت کے مراحل میں ہے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button