- Advertisement -

یروشلم

ایک اردو نظم از ثمینہ راجہ

منار مقدّس پہ —- وعدے کی تصدیق بن کر
فرشتوں کے شانوں پہ ہاتھوں کو پھیلائے
اک روز عیسٰی جو اترا
تو عیسٰی کی حیران آنکھوں نے دیکھا،

سلیماں کے ہیکل میں
سونے کے بچھڑے کی مورت سجی تھی
فضاؤں میں ”لا ” کی صدا تھی
ہواؤں کی آواز نوحہ سرا تھی

منار مقدّس کے نیچے بسی
کلمہ گوؤں کی سخت وحشت زدہ بستیوں پر
عجب سحر خاموش چھایا تھا
فرعون دوراں کے قانون شب رنگ سے
تابش نور حق پر، اندھیرے کا پہرہ تھا
جبر مسلسل کے ہاتھوں میں جکڑی ہوئی—– وقت کی نبض تھی
گنگ تھی ساری صدیوں کی آواز
اور عہد موجود کی چشم انصاف پتھرا چکی تھی

فلسطیں کی خاک لہو رنگ پر پاؤں رکھا
تو عیسٰی کی حیران آنکھوں نے دیکھا،

محمّد کی مظلوم امّت کے
معصوم پھولوں کے ہاتھوں میں پتھر تھے
اور سامنے—- امّت سامری کی سپہ تھی
وہ پتھر نشانوں پہ لگتے نہیں تھے
مگر امّت سامری کی کسی توپ کا قہر
اپنے نشانوں سے ہرگز نہیں چوکتا تھا

فضاؤں میں ”لا ” کی صدا تھی
وہ ”لا ” کی صدا جو زمیں پر بپا تھی
وہ ”لا” کی صدا جو فلک کے
کناروں پہ نوحہ سرا تھی

زمیں سے فلک تک
اسی اک صدائے قضا کا فسوں تھا
وہ شہروں پہ پھیلا ہوا کوئی دشت جنوں تھا
جو عیسٰی کی حیران آنکھوں نے دیکھا

 ثمینہ راجہ

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
جیوتی آزاد کھتری کی ایک اردو غزل