پنجابی شاعریپنجابی کونےشعر و شاعریطاہرہ سرا

جا نی پچھل پیریے صاحباں!

طاہرہ سرا کی ایک پنجابی غزل

جا نی پچھل پیریے صاحباں! مان ودھایا ای ویراں دا
میں خمیازہ بُھگت رہی آں تیرے توڑے تیراں دا

کل میں نقشا ویکھ رہی ساں ہتھاں وچ لکیراں دا
انج ای سمجھو جسراں گُچھا کِکر ٹنگیاں لیراں دا

شکلاں اُتے شکلاں چڑھیاں، جو دِسدا اے ہوندا نہیں
مینوں پُچھو ویکھ رہی آں دُوجا رُخ تصویراں دا

اپنے عملیں آپے مردے کرنی بھرنی ہوندی اے
کملے، جھلّے، بھولے لوکیں ناں لاؤندے تقدیراں دا

اپنے در دی باندی سمجھیں، منگتی سمجھیں سمجھی جا
ایہ وی سوچ کہ ہتھ ہوندا اے محلاں ہیٹھ فقیراں دا

رانجھے تخت ہزارے بیٹھے جھنگ مگھیانے کیدو نیں
کھیڑے جنجاں چاڑھی جاون اللہ ای وارث ہیراں دا

طاؔہرا میں تے لکھ چھڈنی آں رام کہانی ویلے دی
بھاویں اکھاں لوسن پئیاں تک تک منہ تحریراں دا

طاہرہ سرا 

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button