آپ کا سلاماردو غزلیاتجیوتی آزاد کھتریشعر و شاعری

عشق میں کانہا کے رادھا یوں ہی دیوانی نہ تھی

جیوتی آزاد کھتری کی ایک اردو غزل

عشق میں کانہا کے رادھا یوں ہی دیوانی نہ تھی

پر محبت اس کی دنیا ہی نے پہچانی نہ تھی

آج کہتی ہوں میں کھل کر جو نہیں اب تک کہا

تم سے مل کر میں نے جانا عشق نادانی نہ تھی

اگتے سورج کو ہی دنیاں جھک کے کرتی ہے سلام

بدلے تیور پہ ذرا بھی مجھ کو حیرانی نہ تھی

یوں لگے کی جام نظروں سے تری اس نے پیا

اس سے پہلے تو کبھی رت اتنی مستانی نہ تھی

کس لیے غم میں کروں بولو تو اس پہ دوستوں

تھی خبر مجھ کو جوانی لوٹ کر آنی نہ تھی

تجھ کو چاہا تجھ کو پوجا دیوتاؤں کی طرح

بے وفائی سے میں لیکن تیری انجانی نہ تھی

عیب ہی مجھ میں صدا تم کو نظر آئے فقط

خوبیوں کو پر مری تم جیوتیؔ پہچانی نہ تھی

جیوتی آزاد کھتری

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button