آپ کا سلاماردو غزلیاتشعر و شاعریعثمان اقبال خان

اس شور سخن میں ابھی خاموش رہوں گا

عثمان اقبال خان کی ایک اردو غزل

اس شور سخن میں ابھی خاموش رہوں گا
میں شعر کہوں گا تو سلیقے سے کہوں گا

میں حد سے گزر آیا تو سب جھوٹ لگا ہے
آنکھوں نے جو دیکھا ہے میں وہ کرب سہوں گا

میں شاخ بریدہ جو سر راہ ہوں تو کیا
کچھ دیر تو موسم کی ہواوں سے لڑوں گا

جب تک نہ پلٹ آئے بہاروں بھرا موسم
میں سوکھے ہوئے پیڑوں کی آواز بنوں گا

بے چین پڑا ہوں کوئی طوفان لئے دل میں
میں سست نہیں ہوں جو آہستہ بہوں گا

اس آس پہ عثمان سرگرداب پڑا ہوں
اک روز تو دریا کے کنارے سے لگوں گا

عثمان اقبال خان

عثمان اقبال خان

عثمان اقبال خان سیالکوٹ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

Back to top button