- Advertisement -

حسن ہمہ تن گوش ہے

ایک اردو غزل ندیم بھابھہ

حسن ہمہ تن گوش ہے عشق سلام کرے
سائیں سکھائے بولنا سائیں کلام کرے
۔
عشق شریعت ساز ہے عشق طریقت سوز
حکم چلائے آپ پر آپ غلام کرے
۔
پانچ محل ہیں پریم کے پانچوں میں ہے نور
سجدہ راہی پریم کا کس کس گام کرے
۔
سائیں آگے کر دیا اپنے آپ کو ڈھیر
چاہے تو اب خاص ہیں چاہے عام کرے
۔
دل میں اک دل دار ہے جس سے اُس کا پریم
وہی حرم میں آ بسے اور احرام کرے
۔
ایسا نوکر چاہئے جو تنخواہ نہ لے
شب بھر روئے زار زار دن بھر کام کرے

ندیم بھابھہ

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
افتخار شاہد کی ایک غزل