- Advertisement -

Garya Besood Hai

Urdu Ghazal By Ameer Minai

گر یہ بے سود ہے نالے دلِ ناشاد عبث
داد رس کوئی نہیں شکوۃ بیداد عبث

کھنچ گئی روح بدن سے تری شمشیر کے ساتھ
حوصلہ دار لگانے کا ہے جلاد عبث

ایک رنگ آتا ہے یاں ضعف سے اک جاتا ہے
رنگ بھرتا مرے نقشے میں ہے بہزاد عبث

بندہ ہوں تیری محبت کا میں جاؤں گا کہاں
بند کرتا ہے قفس میں مجھے صیاد عبث

ایک مشتاق شہادت بھی تو جوہر نہ ہوا
تجھ میں جوہر ہیں اے خنجرِ فولاد عبث

وہ گل آیا ہے نہ آئے گا کبھی گلشن میں
سروقد اٹھتے ہیں تعطیم کو شمشاد عبث

داد بھی دے گا وہی جس نے یہ کی ہے بیداد
دوڑتی پھرتی ہے ہر سُو مری فریاد عبث

لاکھوں گھر اور ہیں دل میں میرے کیا رکھا ہے
کرتی ہے خانہ خرابی اسے برباد عبث

عمر رفتہ پہ تاسف سے نہیں کچھ حاصل
وہ ہمیں بھول گئے کرتے ہیں ہم یاد عبث

سُن کے درد دل عشق یہ کہتا ہے وہ بت
بندے اللہ کے ہو، مجھ سے ہے فریاد عبث

بال بال اس کا گرفتار بلا ہوتا ہے
بندۃ عشق کو سب کہتے ہیں آزاد عبث

جان دی کام میں معشوق کے سب کچھ پایا
کون کہتا ہے کہ تھی محنت فرہاد عبث

انبیا تک رہے پابند شریعت کے امیر
ظاہری قید سے گھبراتے ہیں آزاد عبث

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
A Urdu Ghazal By Ameer Minai