آپ کا سلاماردو غزلیاتشعر و شاعریشہناز رضوی

فصلِ گُل آئےگی اِک اِک زخمِ دل لہرائے گا

شہناز رضوی کی ایک اردو غزل

فصلِ گُل آئےگی اِک اِک زخمِ دل لہرائے گا
اشک کی تُغیانیوں میں یہ جہاں بہہ جائے گا

جِس قدر بھی تُم چھُپاؤ مُجھ سے اپنا رازِ دل
فاش ہو جائے گا آنکھوں سے عیاں ہو جائےگا

لاکھ مُمکن ہے علاجِ درد لیکن کیا کہیں
درد آخر درد ہے پھِر سے جواں ہو جائے گا

زندگی کا فلسفہ کیا ہے ، نہ سمجھوتے کبھی
مَوت کی کیا ہے حقیقت وقت ہی بتلائے گا

جب مِرے گی دل کی کالک تب بڑھے گا التفات
گیسُؤوں کے بادلوں میں چاند جگمگائےگا

اِس قدر اُلفت ہے ہم سے دلرُبا سیّاد کو
ہم مَریں گے تو ہمیں کِس طرح وہ دفنائے گا

جانکنی کی کیفیت تو ہے کٹھن بے حد کٹھن
زیست کیا ہے جی کے دیکھو تب پتہ چل جائے گا

تین دن تک تیرے بھی گھر میں لگیں گی رونقیں
دیکھنا “ شہناز “ بس اِک آئے گا اِک جائے گا

شہناز رضوی

شہناز رضوی

نام :: شہناز رضوی تخلُّص :: شہناز سکونت :: کراچی پاکستان ادبی خدمات :: آن لائن طرحی مُشاعروں میں فیس بُک کے 9 گروپس میں 2013 سے شرکت کر رہی ہوں ۔ ایک شعری مجموعہ “ متاعِ زیست “ کے نام سے 2019 میں منظرِ عام پہ آ چُکا ہے ۔ اور اب دوسرا مجموعہ حمد و نعت کے حوالے سے بہت جلد آنے والا ہے ان شا اللہ ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button