آپ کا سلاماردو نظمشعر و شاعریمحبوب صابر

بے بسی کا نوحہ

محبوب صابر کی اردو نظم

بے بسی کا نوحہ

رداۓ خوف بِچھی ہے زمیں پہ چاروں طرف
ہر اِک نفس پہ عَجب اضطراب طاری ہے
خُود اپنے آپ کو چُھونے سے لوگ ڈرتے ہیں
یہ وقت اہلِ محبت پہ کتنا بھاری ہے!
کِسی کے دل میں کوئ خواہشِ وصال نہیں
کِسی بھی سوچ میں روشن کوئ جمال نہیں
ہر ایک آنکھ میں رقصاں ہیں بے بسی کے چراغ
ہر ایک رُخ پہ فروزاں ہیں اِضملال کے داغ
کوئ کسی کے لیے کُچھ بھی کر نہیں سکتا
مگر یہ کیا کہ کوئ یوں بھی مر نہیں سکتا
زباں بھی گُنگ ہے، مفلوج ہے صداۓ سخن
نہ شعر و ساز ، نہ سُر تال ہے نہ کوئ لگن
کِسی بھی ہاتھ کی پُوروں میں شوقِ لمس نہیں
نہ کوئ جِسم ہی خواہاں کِسی گُداز کا ہے
چُھپاۓ پھرتی ہے مُنہ زندگی ندامت سے
اسیر ہو گئے ہم خُود میں ہی ملامت سے

محبوب صابر

آڈیو ورژن میں نظم سنیں
شاعر اور آواز: محبوب صابر

سائٹ ایڈمن

’’سلام اردو ‘‘،ادب ،معاشرت اور مذہب کے حوالے سے ایک بہترین ویب پیج ہے ،جہاں آپ کو کلاسک سے لے جدیدادب کا اعلیٰ ترین انتخاب پڑھنے کو ملے گا ،ساتھ ہی خصوصی گوشے اور ادبی تقریبات سے لے کر تحقیق وتنقید،تبصرے اور تجزیے کا عمیق مطالعہ ملے گا ۔ جہاں معاشرتی مسائل کو لے کر سنجیدہ گفتگو ملے گی ۔ جہاں بِنا کسی مسلکی تعصب اور فرقہ وارنہ کج بحثی کے بجائے علمی سطح پر مذہبی تجزیوں سے بہترین رہنمائی حاصل ہوگی ۔ تو آئیے اپنی تخلیقات سے سلام اردوکے ویب پیج کوسجائیے اور معاشرے میں پھیلی بے چینی اور انتشار کو دورکیجیے کہ معاشرے کو جہالت کی تاریکی سے نکالنا ہی سب سے افضل ترین جہاد ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اردو سے ​​مزید
Close
Back to top button