- Advertisement -

Ajab Khajlat E Jaan He Nazar

An Urdu Ghazal By Saud Usmani

عجب خجالتِ جاں ہے نظر تک آئی ہوئی

کہ جیسے زخم کی تقریبِ رونمائی ہوئی

نظر تو اپنے مناظر کی رمز جانتی ہے

کہ آنکھ کہہ نہیں سکتی سنی سنائی ہوئی

برونِ خاک فقط چند ٹھیکرے ہیں مگر

یہاں سے شہر ملیں گے اگر کھدائی ہوئی

خبر نہیں ہے کہ تو بھی وہاں ملے نہ ملے

اگر کبھی مرے دل تک مری رسائی ہوئی

میں آندھیوں کے مقابل کھڑا ہوا ہوں سعود

پڑی ہے فصلِ محبت کٹی کٹائی ہوئ

سعود عثمانی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

سلام اردو سے منتخب سلام
سعود عثمانی کی ایک اردو غزل